Back

ⓘ بارہ آنہ 2009ء کی ایک مزاحیہ ڈراما فلم ہے جسے نے لکھا ہے۔ اس کے اہم کرداروں میں نصیر الدین شاہ، وجے راز، ارجن ماتھور اور تنستھا چٹرجی ہیں۔ یہ فلم بھارت کے درمیا ..




                                     

ⓘ بارہ آنہ

بارہ آنہ 2009ء کی ایک مزاحیہ ڈراما فلم ہے جسے نے لکھا ہے۔ اس کے اہم کرداروں میں نصیر الدین شاہ، وجے راز، ارجن ماتھور اور تنستھا چٹرجی ہیں۔ یہ فلم بھارت کے درمیانی طبقے کے لوگوں اور کام کرنے والوں کی زندگی پر مبنی ہے۔ ممبئی کی روایتی زندگی اور ایک گنجلک رہائشی علاقہ میں رہنے والے تین کردار کیسے جرم کے راستے میں پڑ جاتے ہیں۔ کہانی ایک عجیب سے موڑ پر ختم ہوتی ہے۔

                                     

1. پلاٹ

بارہ آنہ کی کہانی موجودہ کے ممبئی کی زندگی کی عکاسی کرتی ہے۔ تین دوست ایک ہی کمرہ میں رہتے ہیں۔ ایک ادھیڑ عمر شکلا جو ایک ڈوائیور ہوتا ہے، 30 سالہ یادو جو ایک چوکیدار ہے اور امن ریستوراں کا ویٹر جو نوجوان ہے۔ شکلا مستقل مزاج کا آدمی ہے جو اپنے اصولوں کا پابند ہے۔ یادو شائستہ مزاج ہے جو اپنی زندگی میں کچھ اچھا ہونے کا منتظر اور کوشاں ہے جبکہ امن نوجوان، پرجوش، رومانی اور اچھی زندگی کا طالب ہے۔ تینوں ایک ہی کمرہ میں رہتے ہیں اور آپس میں چھوٹی باتوں پر لڑتے جھگڑتے، اپنی ضرورتوں پر ترجیح دیتے ہیں مگر ایک دوسرے کے کام آتے ہیں۔ کہانی اس وقت موڑ لیتی ہے جب چوکیدار کا بیٹا بیمار ہو جاتا ہے۔ اسے پیلیا ہو جاتا ہے اور وہ سوسائٹی میں سب کے پاس مدد کو جاتا ہے مگر کوئی اس کی مدد نہیں کرتا ہے۔ جو کچھ پیسے ہوتے ہیں وہ اسٹیشن پر جیب کاٹ لی جاتی ہے۔ وہ افسردہ، بے یار و مددگار فٹ پاتھ پر بیٹھا رہتا ہے جہاں ایک کار میں تین بدمعاش آتے ہیں اور ان میں سے ایک اسے بلاتا ہے۔ جب وہ نہیں جاتا تو اسے مارنے کے لئے جاتا ہے مگر یادو اسے ایک تھپڑ مارتا ہے جس سے وہ بے ہوش ہو جاتا ہے۔ یادو اسے اپنے گھر لاتا ہے اور اس کے باپ سے پیسے مانگتا ہے۔ بس اس کی آنکھ کھل جاتی ہے اور وہ شکلا اور امن کو بھی اس کے لئے آمادہ کرتا ہے دونوں راضی ہو جاتے ہیں۔ وہ تینوں کچھ لوگوں کو اغوا کرتے ہیں اور خوب پیسے بٹورتے ہیں۔ ایک دن شکلا اپنی مالکن کے برے برتاو سے تنگ اس کو اغوا کرنے کا منصوبہ بناتا ہے۔ حسب سابق مالک سے پیسے کا تقاضا کرتا ہے مگر وہ پولس میں خبر کردیتا ہے۔ ریلوے اسٹیشن پر جب وہ تینوں پیسے حاصل کر رہے ہوتے ہیں تب ہی پولس آجاتی ہے اوت تینوں گرفتار ہو جاتے ہیں۔ یہ فلم زندگی کے اس پہلو کو بھی اجاگر کرتی جہاں پولس میں بدعنوانی عام ہے۔ شکلا ماضی میں اپنے ساتھ ہوئی نا انصافی کی شکایت پولس کو کرتا ہے مگر اس کے بھائی اور رشتہ دار اسے مردہ ثابت کردیتے ہیں اسلئے پولس اس کی سنتی نہیں ہے۔ ادھر یادو اپنی سوسائٹی سب سے پریشان رہتا ہے کیونکہ کوئی اس کے ساتھ اچھا سلوک نہیں کرتا ہے۔ امن کو ایک فرنگی لڑکی پیار کا جھانسہ دیتی ہے اور اس ے پیسے لے کر بھاگ جاتی ہے۔