Back

ⓘ مولا جٹ سال 1979ء میں لالی وڈ کی تاریخ کی کامیاب ترین پنجابی فلم مولاجٹ ریلیز ہوئی فلم کے اداکاروں میں سلطان راہی اور مصطفی قریشی شامل تھے۔ فلم کے ہدایت کار یون ..




مولا جٹ
                                     

ⓘ مولا جٹ

مولا جٹ سال 1979ء میں لالی وڈ کی تاریخ کی کامیاب ترین پنجابی فلم مولاجٹ ریلیز ہوئی فلم کے اداکاروں میں سلطان راہی اور مصطفی قریشی شامل تھے۔ فلم کے ہدایت کار یونس ملک تھے۔ یہ فلم لاہور کے گلستان سینما میں مسلسل 130 ہفتوں تک چلتی رہی تھی اور اپنی اوّلین نمائش کے دوران مجموعی طور پر 310 ہفتوں تک چلی۔ اُسکے بعد بھی یہ اُترنے کا نام نہ لے رہی تھی لیکن انسانی ٹانگ کاٹنے کے ایک پُر تشدد منظر پر اعتراض کے باعث چلتی فلم کو بین کر دیا گیا ورنہ یقیناً مولا جٹ بھارتی فلم ’شعلے‘ کا ریکارڈ توڑ دیتی جو اس نے مسلمل پانچ برس تک چل کر قائم کیاتھا۔

مولا جٹ پہلی فلم تھی جِس نےلاہورکے علاوہ راولپنڈی، فیصل آباد اور ملتان میں بھی الگ گولڈن جوبلی کی اور گجرات، گوجرانوالہ، سیالکوٹ اور سرگودھا میں الگ سلور جوبلی کی۔

                                     

1. گیت

اس فلم کے گیتوں کے موسیقار ماسٹر عنایت حسین تھے۔ یہ گیت پاکستان کے مشہور و معروف گلوکاروں نور جہاں، مہناز، عنایت حسین بھٹی، عالم لوہار، شوکت علی اور غلام علی نے گائے۔ نسیم فضل، سلطان باہو

اس فلم کے مشہور گیت:

  • نشے دیے بند بوتلے، نہ اینی ات چک نی۔. عنایت حسین بھٹی
  • دلدار میرے پیار کولوں بچ کے تے کتھے میڈم نور جہاں
  • جھانجھر کرے تینوں پیار وے، میں مر گئی مہناز
  • ایہہ تے ویلا آپ دسے گا، کون مردا میدان پہلے ہلے عالم لوہار، شوکت علی
  • رووے ماں تے غرور، اج ہسے مجبور میڈم نور جہاں