Back

ⓘ ہیر رانجھا, فلم 1970ء، پنجابی. ہیر رانجھا ‏1970ء میں نمائش کے لیے پیش ہونے والی پنجابی زبان میں پاکستان کی مقبول ترین فلم تھی۔ یہ فلم پنجاب کی مشہور لوک داستان ..




                                     

ⓘ ہیر رانجھا (فلم 1970ء، پنجابی)

ہیر رانجھا ‏1970ء میں نمائش کے لیے پیش ہونے والی پنجابی زبان میں پاکستان کی مقبول ترین فلم تھی۔ یہ فلم پنجاب کی مشہور لوک داستان ہیر رانجھا پر مبنی تھی جسے وارث شاہ نے تحریر کر کے امر کر دیا۔

ہیر رانجھا کی داستان پر اس فلم سے پہلے بھی کئی فلمیں بن چکی تھیں۔ تقسیم ہند سے پہلے اس داستان پر 1932ء میں ہیر رانجھا فلم ساز عبد الرشید کاردار کے نام سے فلم بنی جب کہ قیام پاکستان کے بعد نذیر نے 1955ء میں ہیر اور 1962ء میں ہیر سیال کے نام سے اس داستان کو فلم بند کیا گیا مگر 1970ء میں ریلیز ہونے والی فلم ہیر رانجھا کو بلاشبہ ایک شاہکار فلم قرا دیا جاسکتا ہے۔

ہیر رانجھا کی نمائش 19 جون، 1970ء کو ہوئی۔ اس فلم کے فلم ساز اعجاز اور مسعود پرویز، ہدایت کار و کہانی کار مسعود پرویز،موسیقار خواجہ خورشید انور، نغمہ نگار احمد راہی اور عکاس مسعود الرحمان تھے۔ اس فلم میں فردوس اور اعجاز درانی نے ہیر اور رانجھا کا کردار ادا کیا۔

                                     

1. موسیقی

اس فلم کی موسیقی خواجہ خورشید انور نے ترتیب دی جبکہ نغمات احمد راہی تحریر کیے۔ پس پردہ گلوکاروں میں ملکہ ترنم نور جہاں، مسعود رانا، نسیم بیگم اور غلام علی شامل تھے۔

                                     

2. بیرونی روابط

  • توں چور میں تیری چوری بلوچا ہانیا یوٹیوب پر
  • سن ونجلی دی مٹھڑی تان وے یوٹیوب پر
  • کدی آ مل رانجھن وے، تینوں دل دا حال سناواں یوٹیوب پر
  • تیری خیر ہوئے، ڈولی چڑھ جان والیے یوٹیوب پر
  • او ونجلی والڑیا، توں تاں موہ لئی او مٹیار یوٹیوب پر
  • میں چھم نچاں، میں چھم گاواں یوٹیوب پر
  • زلفاں دی ٹھنڈی چھاں ڈھولنا یوٹیوب پر
  • چن ماہیا تیری راہ پئی تکنی آں یوٹیوب پر