ⓘ Free online encyclopedia. Did you know? page 51




                                               

سعودی عرب اور وہابیت کی تاریخ

سعودی عرب اور وہابیت کی تاریخ انگریزی زبان میں، انور ہارون کی ایک کتاب ہے جس کا موضوع سعودی عرب اور وہابیت کی تاریخ ہے۔ اس کتاب کا ماخذ پاکستانی مفتی عبدالقیوم ہزاروی قادری کی اردو کتاب "تاریخ نجد و حجاز" ہے۔ تاہم یہ انگریزی ترجمہ ریاست ہائے متحد ...

                                               

صفا و مروہ

صفا اور مروہ دو پہاڑیوں کے نام ہیں جو مکہ میں خانۂ کعبہ کے پاس واقع ہیں ان دو پہاڑیوں کے درمیان حج اور عمرہ کے موقع پر حاجی سات چکر لگائے ہیں اسے سعی کہتے ہیں۔ صفا و مروہ کے درمیان ہی اسماعیل علیہ السلام کی والدہ ہاجرہ پانی کی تلاش میں سعی کرتی ر ...

                                               

فدک

فدک ایک زمینی رقبہ ہے جو سعودی عرب کے شمال میں خیبر کے مقام پر مدینہ سے تیس میل کے فاصلے پر واقع ہے اور یہ بھی کہاگیا کہ حجاز کا ایک کنارہ ہے جس میں چشمے اور کھجوروں کے درخت ہیں۔ مسلمانوں کے دو بڑے گروہ اس کی ملکیت سے متعلق جدا تاریخی نقطہ نظر رک ...

                                               

مجموعہ بن لادن

سعودی بن لادن یا مجموعہ بن لادن سعودی عرب کے بن لادن خاندان کی ملکیت اثاثوں کی ایک کثیر القومی تعمیراتی اور ہولڈنگ کمپنی ہے۔ اس کا صدر دفتر جدہ، سعودی عرب میں واقع ہے۔ مجموعہ بن لادن نے حال ہی میں جدہ میں دنیا کی سب سے بلند عمارت برج مملکت تعمیر ...

                                               

مرکز المملکہ

مركز المملکہ یا کنگڈم سینٹر سعودی عرب کے دار الحکومت ریاض میں واقع ملک کی بلند ترین عمارت ہے جسے دنیا کی خوبصورت ترین عمارتوں میں سے ایک شمار کیا جاتا ہے۔ 302 میٹر بلند یہ عمارت دنیا کی بلند ترین عمارات کی فہرست میں 25 ویں نمبر پر ہے۔ برج 94 ہزار ...

                                               

نیوم، سعودی عرب

نیوم، سعودی عرب سعودی عرب کے شہر تبوک میں ایک کثیر ملکی اور کثیر سرحدی مجوزہ اقتصادی شہر کا نام ہے جس کا رقبہ 10.230-مربع میل ہے۔ یہ شہر مشترکہ طور پر سعودی عرب، اردن اور مصر کے سرحدی علاقوں میں تعمیر کیا جائے گا۔ نیوم اسٹائل NEOM؛ عربی: نیوم شما ...

                                               

باب صغیر

بابِ صغیر شام کے شہر دمشق میں ایک علاقہ اور دروازہ کا نام ہے جہاں ایک قدیم دروازہ ہے جو دمشق کے قدیم دروازوں میں سے ایک ہے۔ بابِ صغیر وہی جگہ ہے جہاں کربلا کے قافلے کو گھنٹوں ننگے سر اور خالی پیٹ ٹھہرایا گیا تھا تاکہ ان کو یزید بن معاویہ کے دربار ...

                                               

خرطوم

خرطوم سوڈان کا دارالحکومت ہے۔ یہ عین اس مقام پر واقع ہے جہاں نیل ابیض اور نیل ازرق آپس میں ملتے ہیں۔ اول الذکر دریا یوگینڈا سے جبکہ آخر الذکر ایتھوپیا سے سفر کرتا ہوا یہاں دریائے نیل کی صورت اختیار کرتا ہے اور پھر مصر سے بہتا ہوا بحیرہ روم میں جا ...

                                               

دارفور

سبھی لوگ مدینہ منورہ سے واقف ہیں اور شاید بعض ”ابیارِ علی" سے بھی واقف ہوں گے جو باشند گانِ مدینہ منورہ کی میقات ہے جہاں حج یا عمرہ کرنے والا نیت کرکے احرام باندھتا ہے۔ نبی صلی الله علیہ وسلم کے زمانے میں اس جگہ کا نام ذوالحلیفہ تھا بعض لوگ غلط ف ...

                                               

ابن زیاد

گورنر کوفہ، پورا نام عبید اللہ بن زیاد۔ مسلم بن عقیل نے کوفے میں امام حسین کے حق میں زمین ہموار کرنا شروع کی تو یزید بن معاویہ نے ابن زیاد کو بصرے سے تبدیل کرکے کوفے کا گورنر مقرر کر دیا۔ اس نے پہلے مسلم بن عقیل اور ان کے دو کم سن فرزندوں کو شہید ...

                                               

بابل کے معلق باغات

بابل کے معلق باغات دنیا کے سات قدیم عجائبات میں دوسرے نمبر پر شمار ہوتے ہیں - اور یہ وہ واحد عجوبہ ہے جس کا اصل مقام ابھی تک معلوم نہیں ہو سکا - چھٹی صدی قبل از مسیح میں بنو کد نضر کے عہد میں بابل میں کلدائی سلطنت کا احیاء ہوا تو اس نے اپنی ملکہ ...

                                               

حوزہ علمیہ نجف اشرف

حوزہ علمیہ نجف اشرف اہل تشیع عالم کا معتبر، قدیم اور اہم ترین علمی مرکز ہے جو عراق کے شہر نجف میں واقع ہے۔ مکتب و حوزهٔ تعلیم حدیث قم اہل تشیع کے جہان علم و عرفان کے تین قدیم و معتبر اداروں میں سے ایک ہے جس کی بنیاد ثانی جیّد عالم دین اور مجتہد ش ...

                                               

سقوط بغداد 2003ء

2003ء میں عراق پر اتحادی افواج کے حملے کے ہفتوں بعد امریکی افواج نے دار الحکومت بغداد کی جانب پیش قدمی کی اور شہر کے جنوبی علاقوں میں عراقی افواج کی کمزور مزاحمت کے بعد 5 اپریل کو بغداد کے ہوائی اڈے پر قبضہ کرنے میں کامیاب ہو گئے۔ دو روز بعد صدام ...

                                               

سمیری

سمیریا: عراق کا ایک قدیم شہر۔ سمیری یا سومر عراق کی ایک قدیم تہذیب کا نام ہے جو چار ہزار سال قبل مسیح سے لے کر تین ہزار سال قبل مسیح تک دریائے دجلہ و فرات کے درمیان موجود تھی۔ خیال کیا جاتا ہے کہ یہ لوگ سامی النسل نہیں تھے اور اس علاقے کے باھر سے ...

                                               

کردستان علاقہ

کردستان علاقہ یا جنوبی کردستان جسے کردستان علاقہ بھی کہا جاتا ہے شمالی عراق میں ایک خود مختار علاقہ ہے۔

                                               

باب: قبرص/Intro

قبرص مشرقی بحیرہ روم کا ایک جزیرہ اور ملک ہے جو اناطولیہ کے جنوب میں واقع ہے۔ جمہوریہ قبرص 6 اضلاع میں تقسیم ہے جبکہ ملک کا دار الحکومت نکوسیا ہے۔ 1913ء میں برطانوی نو آبادیاتی بننے والا قبرص 1960ء میں برطانیہ سے آزادی حاصل کرنے میں کامیاب ہوا۔ 1 ...

                                               

دوحہ

دوحہ مملکت قطر کا دارالحکومت ہے جو خلیج فارس کے ساحلوں پر واقع ہے۔ 4 لاکھ کی آبادی کے ساتھ یہ ملک کا سب سے بڑا شہر ہے اور ملک کی 80 فیصد آبادی اسی شہر اور اس کے گرد و نواح میں رہائش پزیر ہے۔ یہ مملکت کا اقتصادی مرکز ہے۔

                                               

برج العرب

برج العرب متحدہ عرب امارات کے سب سے بڑے شہر دبئی کا ایک پرتعیش ہوٹل ہے جسے دنیا کا پہلا 7 ستارہ ہوٹل ہونے کا اعزاز حاصل ہے۔ 321 میٹر کی بلندی کے ساتھ برج العرب دنیا کا سب سے بلند ہوٹل ہے۔ یہ دبئی کے ساحل جمیرہ سے 280 میٹر دور ایک مصنوعی جزیرے پر ...

                                               

جزائر عالم

جزائر عالم متحدہ عرب امارات کے شہر دبئی کے ساحلوں پر خلیج فارس میں زیر تعمیر مصنوعی مجموعہ جزائر ہیں جنہیں دنیا کے براعظموں کی شکل میں تعمیر کیا جا رہا ہے۔ یہ منصوبہ دبئی ہی میں زیر تعمیر مصنوعی جزائر نخیل سے متاثر ہوکر شروع کیا گیا۔ جزائر عالم 2 ...

                                               

جزائر نخیل

جزائر نخیل Palm Islands دنیا کے تین سب سے بڑے مصنوعی جزیرے ہیں جنہیں متحدہ عرب امارات کے تعمیراتی ادارہ نخیل پراپرٹیز نے دبئی میں۔تیار کیا ہے ۔ یہ تینوں جزیرے کھجور کے درخت اور ہلال کی شکل کے ہیں جہاں رہائشی عمارات اور ہوٹل تعمیر کیے جا رہے ہیں۔ ...

                                               

آل بویہ

خلافت عباسیہ کے عروج کے زمانے ٢٤٧ھ تک اندلس اور مراکش کے چھوٹے ملکوں کو چھوڑ کر باقی ساری اسلامی دنیا موجودہ پاکستان اور فرغانہ لے کر قیروان تک عباسی خلافت کے تحت تھی لیکن عباسی خلافت کے زوال کے بعد اس اتحاد اور وحدت کا خاتمہ ہو گیا اور کئی خود م ...

                                               

آل مظفر

آل مظفر 1315ء سے 1393ء تک ایران میں زیر اقتدار ایک حکومت تھی جس کا بانی ایک ایرانی امیر مظفر تھا جو ایل خانی حکومت کی طرف سے شہر یزد کا حاکم تھا۔ 1315ء میں سلطان ابو سعید نے اس کے لڑکے مبارز الدین محمد کو یزد اور فارس کی حکومت دے دی اور وہ ایل خا ...

                                               

اشوریہ

اشوریہ تقریباً دو ہزار برس قبل مسیح میں شمالی عراق کے دریائے دجلہ و فرات کے وسط میں فروغ پانے والی ایک تہذیب اور سلطنت تھی جو اپنے دور عروج میں مصر، شام، لبنان، آرمینیا، ایلم اور بابل تک پھیلی ہوئی تھی۔ ابتدا میں اس کا دار السلطنت شہر اشور تھا، چ ...

                                               

امارت نجد

امارت نجد دوسری سعودی ریاست تھی۔ سعودی حکمرانی وسطی اور مشرقی عرب میں بحال ہو گئی۔ دوسری ریاست کے حکمران: امام ترکی بن عبد اللہ بن فیصل تیسری بار، 1876-1889 امام فیصل بن ترکی بن عبداللہ دوسری بار 1843-1865 امام عبد الرحمان بن فیصل بن ترکی پہلی با ...

                                               

ایل خانی

ایل خانی ایک منگول خاندان تھا جسے 13 ویں صدی میں ایران میں قائم کیا گیا اور منگول سلطنت کا ایک حصہ سمجھا جاتا تھا۔ ایل خانی کی بنیاد اصل میں خوارزم شاہی سلطنت میں چنگیز خان کی 1219ء تا 1224ء کی مہمات پر ہے، بعد میں چنگیز خان کے پوتے ہلاکو خان نے ...

                                               

ایوبی سلطنت

ایوبی سلطنت یا سلطنت آل ایوب کرد نسل کے مسلم خاندان کی حکومت تھی جس نے 12 ویں اور 13 ویں صدی میں مصر، شام، یمن، دیار باکر، مکہ، حجاز اور شمالی عراق پر حکومت کی۔ ایوبی سلطنت کے بانی صلاح الدین ایوبی تھے جن کے چچا شیر کوہ نے زنگی سلطان نور الدین زن ...

                                               

جلائر

جلائری قبائل ایل خانیوں ہی کی ایک شاخ تھی اور یہ نسلا منگول تھے۔ جب ایل خانی سلطان ابو سعید کا انتقال ہوا تو امرا مرکز میں صاحب اقتدار ہو گئے۔ وہ جس کو چاہتے تخت نشین کرتے اور جس کو چاہتے تخت سے اتار دیتے۔ ان میں جلائری سردارشیخ حسن بزرگ نے جب اق ...

                                               

حشمونی سلطنت

حشمونی سلطنت یا سلطنت حشمونیہ زمانہ قدیم میں یہوداہ اور اس کے مضافات پر حکمران ایک نیم خود مختار سلسلہ شہنشاہی تھا جس نے 160 قبل مسیح سے لیکر 116 قبل مسیح تک سلوقیوں کے زیر خراج یہوداہ پر حکومت کی۔ سلسلہ حشمونی 110 قبل مسیح میں سلطنت سلوقیہ کے زو ...

                                               

خاندان افشار

خاندان افشار ایک ترک النسل مقامی ایرانی شاہی خاندان تھا۔ خاندان کی بنیاد نادر شاہ جو عظیم عسکری صلاحیتوں کا مالک تھا نے رکھی۔ نادر شاہ صفوی سلطنت کے آخری رکن کو معزول کر کے خود کے بطور شاہ ایران کا اعلان کیا۔ ساسانی سلطنت کے بعد ایران نادر شاہ کے ...

                                               

خاندان گاوبارگان

Inostranzev, M. 1918 Iranian Influence on Moslem Literature – Appendix I: Independent Zoroastrian Princes of Tabaristan. Pourshariati، Parvaneh 2008. Decline and Fall of the Sasanian Empire: The Sasanian-Parthian Confederacy and the Arab Conquest ...

                                               

خلافت راشدہ

محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کے وصال کے بعد ابوبکر صدیق، عمر فاروق، عثمان غنی اور علی المرتضی، حسن المجتبی کا عہد خلافت راشدہ کہلاتا ہے۔ اس عہد کی مجموعی مدت تیس سال ہے جس میں ابوبکر صدیق اولین اور علی آخری خلیفہ ہیں، حسن کی خلافت کے چھ ماہ خلاف ...

                                               

خلافت عباسیہ

خلافت راشدہ کے خاتمے کے بعد عربوں کی قائم کردہ دو عظیم ترین سلطنتوں میں سے دوسری سلطنت خلافت عباسیہ ہے۔خاندان عباسیہ کے دو بھائیوں السفاح اور ابو جعفر المنصور نے خلافت قائم کی جس کا قیام 750ء میں عمل میں آیا اور 1258ء میں اس کا خاتمہ ہو گیا۔ یہ خ ...

                                               

زند خاندان

خاندان زند ایک ایرانی شاہی خاندان تھا جس کی بنیاد کریم خان زند نے رکھی۔ ابتدائی طور پر اٹھارویں صدی میں اس کا دائرہ اختیار جنوبی اور وسطی ایران تھا، لیکن جلد ہی اس کی توسیع عصر حاضر کے ایران کے علاوہ آذربائیجان اور عراق اور آرمینیا کے کچھ حصوں تک ...

                                               

سلاجقہ روم

سلاجقۂ روم 1077ء سے 1307ء تک اناطولیہ میں قائم رہنے والی ایک سلطنت تھی۔ اس سلطنت کے علاقے بازنطینی سلطنت کے مفتوحہ رومی علاقوں پر مشتمل تھے۔ 1070ء کی دہائی میں سلجوقی سلطنت کے عظیم حکمران ملک شاہ اول کے قریبی عزیز سلیمان ابن قتلمش نے مغربی اناطول ...

                                               

عمون

عمون دریائے اردن کے مشرق میں وادی موجب اور دریائے زرقا درمیانی علاقے میں آہنی دور میں آباد سامی زبان بولنے والی ایک قوم تھی۔

                                               

فارسی سلطنت

فارسی سلطنت کوئی بھی فارس میں مرکوز شاہی خاندانوں کا ایک سلسلہ ہے۔ اس کی حدود اتار چڑھاو آتا رہا ہے اور اس میں شام کئی علاقے اب ایک آزاد ریاست ہیں مثلا پاکستان، افغانستان، تاجکستان اور آذربائیجان۔ سب سے پہلی سلطنت کورش اعظم نے 2،500 سال سے زائد پ ...

                                               

قرہ قویونلو

قرہ قویونلو ترکمان نسل کا ایک قبیلہ تھا جس نے موجودہ مشرقی اناطولیہ، آرمینیا، ایرانی آذربائیجان اور شمالی عراق پر 1375ء سے 1468ء تک حکومت کی۔ قرہ قویونلو ترکمانوں نے ایک مرتبہ مشرقی فارس میں ہرات کو بھی اپنا دار الحکومت بنایا۔ وہ جلائر کے باجگذار ...

                                               

نوآبادی عدن

Colonial Reports. Aden Report: 1953ޢ ، HM Stationery Office 1956. E. H. Rawlings. The Importance of Aden ۔ Contemporary Review, 195, 1959. Tom Little. South Arabia: Arena of Conflict ۔ London: Pall Mall Press, 1968. Paul Dresch. A History of Mode ...

                                               

اسوان بند

اسوان بند مصر کے شہر اسوان کے قریب دریائے نیل پر قائم ایک عظیم بند ہے۔ دراصل یہ دو بند ہیں جن میں ایک جدید اور ایک قدیم ہے۔ جدید بند کو عربی میں "السد العالی" جبکہ انگریزی میں Aswan High Dam کہتے ہیں۔ قدیم بند کو Aswan Low Dam کہا جاتا ہے۔

                                               

بدرالدین سلامش

مزید پڑھیں: ظاہر رکن الدین بیبرس بندقداری ، سیف الدین قلاوون سلامش اپنے والد ظاہر رکن الدین بیبرس بندقداری کی وفات پر سات سال کا تھا۔ امرائے حکومت نے اُسے الملک العادل بدر الدین کا شاہی خطاب دے کر اگست 1279ء میں بحیثیتِ سلطان سلطنت مملوک مصر تخت ...

                                               

جزیرہ نما سینا

جزیرہ نمائے سینا مصر میں مثلث شکل کا ایک جزیرہ نما ہے جس کے شمال میں بحیرہ روم اور جنوب میں بحیرہ احمر ہے۔ یہ تقریبا 67 ہزار مربع کلومیٹر پر پھیلا ہوا ہے۔ جزیرہ نما کی زمینی سرحدیں مغرب میں نہر سوئز اور شمال مشرق میں اسرائیل سے ملتی ہیں۔ جزیرہ نم ...

                                               

رمسيس ثانی

رمسيس ثانی یا رعمسیس دوم قدیم مصر کے اُنیسویں شاہی خاندان کا تیسرا فرعون تھا۔ اس نے ایتھوپیا اور شام کو دوبارہ فتح کیا۔ شام کی تسخیر کے سلسلے میں اسے حیتوں سے ہولناک جنگیں لڑنی پڑیں۔ اس نے اپنے دورِ حکومت میں کئی شاندار عمارتیں بنوائیں جن میں ابو ...

                                               

ریان بن ولید

ریان بن ولید مصر کے بادشاہ کا نام تھا۔ جس بادشاہ مصر نے ایک خواب دیکھا اس بادشاہ کا نام ریان بن ولید تھا اور عزیز مصر اس کا وزیر تھا۔ بادشاہ نے اپنے وزراء اور ارکان دولت کو جمع کرکے جو خواب دیکھا تھا اس کو بیان کرنا شروع کیا۔

                                               

فرعون

فرعون کسی خاص شخص کا نام نہیں ہے بلکہ شاہان مصر کا لقب تھا۔ جس طرح چین کے بادشاہ کو خاقان اور روس کے بادشاہ کو زار اور روم کے بادشاہ کو قیصر اور ایران کے بادشاہ کو کسریٰ کہتے تھے اسی طرح مصر کے بادشاہ کو فرعون کہتے تھے۔ فرعون اصل میں فارا، اَوْہ ...

                                               

محمد علی پاشا

محمد علی پاشا آل محمد علی کی سلطنت اور جدید مصر کے بانی تھے۔ وہ مصر کے خدیو یا والی تھے۔ محمد علی موجودہ یونان کے شہر کوالا میں ایک البانوی خاندان میں پیدا ہوئے۔ نوجوانی میں تجارت سے وابستہ ہونے کے بعد وہ عثمانی فوج میں شامل ہو گئے۔

                                               

مصر کا اٹھائیسواں شاہی سلسلہ

مصر کا اٹھائیسواں شاہی سلسلہ یا صاوی خاندان ، مصر کا ایک شاہی خاندان تھا۔ یہ خاندان مصر کا اٹھائیسواں خاندان تھا۔ اس خاندان نے صرف سات سال تک حکومت کی۔ اس کا نام اس کے پہلے بادشاہ صاوی کی وجہ سے پڑا ہے۔ اس خاندان میں یہی ایک بادشاہ امیر تیس ہوا، ...

                                               

باب: مصر/Intro

عرب جمہوریہ مصر یا مصر ، جمهورية مصر العربية، بر اعظم افریقا کے شمال مغرب اور بر اعظم ایشیا کے سنائی جزیرہ نما میں واقع ایک ملک ہے۔ مصر کا رقبہ 1،001،450 مربع کلو میٹر ہے۔ مصر کی سرحدوں کو دیکھا جائے تو مغرب میں لیبیا، جنوب میں سوڈان، مشرق میں بح ...

                                               

مصری فوجی تاخت، 2013ء

3 جولائی 2013ء کو مصری فوج کے جامع عبد لفتح السیسی نے مصر کے منتخب صدر محمد مرسی کے خلاف فوجی تاخت برپا کر دیا۔ مرسی کے اقتدار کا ایک سال مکمل ہونے پر قاہرہ میں حزب اختلاف کی جماعتوں نے بڑے مظاہرے کیے جس پر فوج نے مرسی کو حزب اختلاف سے معاملات طے ...

                                               

جھیل ناصر

جھیل ناصر جنوبی مصر اور شمالی سوڈان کا ایک عظیم آبی ذخیرہ ہے۔ اس کا 83 فیصد حصہ مصر میں ہے جہاں اسے جھیل ناصر کہا جاتا ہے جبکہ سوڈان میں اسے جھیل نوبیا کے نام سے پکارا جاتا ہے۔ یہ جھیل 1958ء سے 1970ء کے دوران دریائے نیل پر تعمیر کیے جانے والے اسو ...

                                               

Ninth Army (Ottoman Empire)

ستمبر 1918 میں ، فوج کی تشکیل اس طرح کی گئی تھی: نویں قفقازی ڈویژن، گیارھویں ڈویژن ، بارھویں ڈویژن ،خود مختار گھڑسوار دستہ نویں فوج، میرلیوا يعقوب شوقی پاشا