ⓘ Free online encyclopedia. Did you know? page 204



                                               

قلیچ خاں

قلیچ خاں یا قلیچ خاں دؤم مغلیہ سلطنت کے مغل شہنشاہ اورنگزیب عالمگیر کا ایک جرنیل تھا جس نے گولکنڈہ پر مغلوں کے محاصرے میں بطور جرنیل شرکت کی۔

                                               

لارڈ ڈلہوزی

لارڈ ڈلہوزی ہندوستان کا گورنر جنرل تھا۔ 1848ء میں ہندوستان آیا۔ اس کے عہد میں برما اور سکھوں کی دوسری لڑائی ہوئی اور پنجاب پر انگریزوں کا قبضہ ہو گیا۔ ڈلہوزی نے ہندوستانی ریاستوں کے الحاق پر بڑی سختی سے عمل کیا۔ ستارہ، جھانسی، ناگپور اور اودھ کے ...

                                               

مبارک شاہ (سید خاندان)

خضر خان کو اپنی علالت کے دوران یہ اندازہ ہو گیا تھا کہ اُس کا وقت آخر قریب ہے تو اُس نے اپنے بڑے بیٹے مبارک شاہ کو اپنا ولی عہد مقرر کر دیا۔ مبارک شاہ نے باپ خضر خان کے انتقال کے تیسرے دن 24 مئی 1421ء کو حکومت کی باگ دوڑ سنبھالی اور اپنا لقب معز ...

                                               

مجدد الف ثانی

شیخ احمد سرہندی المعروف مجدد الف ثانی دسویں صدی ہجریکے نہایت ہی مشہور عالم و صوفی تھے۔ جو مجدد الف ثانی اور قیوم اول سے معروف ہیں۔ آپ کے مشہور خلیفہ سید آدم بنوری ہیں۔

                                               

مدراس ریاست

مدراس ریاست موجودہ ہندوستان کی ریاست، تامل ناڈو کا، 26 جنوری 1950 سے 1968تک نام تھا ۔ اصل میں ، یہ ریاست ساحلی آندھرا پردیش ، شمالی کیرالہ اور کرناٹک سے بیلاری ، جنوبی کنڑا وغیرہ آتی تھی۔ یہ ریاست 1958 میں موجودہ حالت میں گھٹ کر رہ گئی تھی۔ 1953 ...

                                               

مشرقی بھارت

مشرقی بھارت یا مشرقی ہند بھارت کا ایک علاقہ ہے جس میں مغربی بنگال, بہار, جھاڑکھنڈ، اڑیسہ اور جزائر انڈمان و نکوبار شامل ہیں۔

                                               

معز الدین کیقباد

معز الدین کیقباد سلطنت دہلی کا دسواں سلطان تھا جو خاندان غلاماں سے تعلق رکھتا تھا۔ وہ غیاث الدین بلبن کا پوتا تھا۔ معز الدین کیقباد راج دور:1287– 1 فروری 1290 مملوک خاندان غلام خاندان کا دسواں سلطان تھا۔ وہ بنگال کے آزاد سلطان بغرا خان کا بیٹا تھ ...

                                               

مغربی بھارت

                                               

مغلانی بیگم

مغلانی بیگم جسے مراد بیگم بھی کہا جاتا ہے، نے 18 ویں صدی کے وسط میں کچھ سال لاہور سے پنجابپر حکمرانی کی۔ وہ اپنے ذاتی فوائد کے لئے اپنے دوستوں اور دشمنوں کو ایک دوسرے کے خلاف لڑنے کے لئے اکستاتی رہتی تھیں۔ وہ معین الملک کی اہلیہ تھیں، جو سنہ 1748 ...

                                               

مفتی صدر الدین خان آزردہ

مفتی صدر الدین خان آزردہ ایک انتہائی اعلیٰ عہدے دہلی کے مفتی اعظم تھے دہلی میں شریعت کے معاملات میں ان کا فتویٰ حتمی حیثیت کا سمجھا جاتا۔ وہ جنگ آزادی ہند 1857ء میں بطل حریت علامہ فضل حق خیر آبادی شہید کے رفقا مسلم رہنمائے جنگ علمائے اہل سنت میں ...

                                               

موکھری خاندان

موکھری خاندان راج گپتا خاندان کے خاتمے کے بعد قائم ہوا تھا ۔ گیا کے موکھاری لوگ جو چکورورتی گپتا خاندان کے وقت گپتا خاندان کے جاگیردار تھے۔ موکھری خاندان کے لوگوں کو تیسری صدی میں اتر پردیش کے کنجوج اور راجستھان کے باروا خطے میں پھیلایا گیا تھا۔ ...

                                               

مگدھ مہاجنپد

مگدھ قدیم ہندوستان کے 16 مہاجن پدوں میں سے ایک تھا۔ جدید پٹنہ اور گیا ضلع اس میں شامل تھے۔ اس کا دارالحکومت گیریراج پاٹلی پتر تھا۔ برہدراتھ اور جارسندھا یہاں بھگدھ بدھ کے نیک نامور بادشاہ تھے۔ فی الحال ، بہار میں اس نام سے ایک مگدھ ڈویژن ہے ۔ مگد ...

                                               

مہایان

مہایان فرقہ نے وسیع المشرب اور آزاد خیال بدھی مکتب فکر کی حیثیت سے چوتھی صدی قبل مسیح میں اپنے بنیادی خدوخال مرتب کیے۔ مہایانوں نے گوتم بدھ کے روایتی افکار اور خیالات کی بہت سے نئے زاویوں سے تشریح و تفسیر کی۔ اس مکتب فکر سے تعلق رکھنے والے علما ن ...

                                               

میر جعفر

میر جعفر نام جعفر علی خان نواب سراج الدولہ کی فوج میں ایک سردار تھا۔ بعد میں ترقی کرتے ہوئے سپہ سالار کے عہدے تک پہنچ گیا یہ نہایت بد فطرت آدمی تھا۔ اس کی نگاہیں تخت بنگال پر تھیں یہ چاہتاتھا کہ نوجوان نواب کو ہٹاکر خود نواب بن جائے اس لیے اس نے ...

                                               

ناصر الدین محمود

ناصر الدین محمود سلطنت دہلی کا آٹھواں سلطان رہا جس کا تعلق خاندان غلاماں سے تھا۔ وہ شمس الدین التمش کا سب سے چھوٹا بیٹا تھا اور علاؤ الدین مسعود کی جگہ تخت پر بیٹھا۔ وہ انتہائی دیندار اور عبادت گزار حکمران تھا اور اپنی رحم دلی کے باعث مشہور تھا۔ ...

                                               

نواب فیض النساء

نواب بیگم فیض النساء چودھرانی ہومنا آباد کی زمیندار تھیں جو آج کل بنگلہ دیش کے ضلع کومیلا کی پشم گاؤں ریاست ہے۔وہ خواتین کی تعلیم اور دوسرے سماجی کاموں کے لیے بہت مشہور ہیں۔ان کی سماجی خدمات کے اعتراف میں 1889ء میں ملکہ وکٹوریا نے فیض النساء کو " ...

                                               

نورالدین جہانگیر

اکبر اعظم کے تین لڑکے تھے۔ سلیم ، مراد اور دانیال۔ مراد اور دانیال باپ کی زندگی ہی میں شراب نوشی کی وجہ سے مر چکے تھے۔ اکبر اعظم کی 1605ء میں وفات کے بعد شہزادہ سلیم نور الدین جہانگیر کے لقب سے تخت نشین ہوا۔ اس نے کئی مفید اصلاحات نافذ کیں: کئی ن ...

                                               

نوہانی خاندان

نوہانی خاندان کا عروج قرون وسطی کی بہار کی تاریخ میں ایک اہم اور خاص مقام رکھتا ہے کیونکہ اس کا عروج سکندر لودھی کے دور میں ہونے والی سیاسی تبدیلیوں سے منسلک ہے۔ جب سکندر لودی سلطان ہوا تو ، اس کے بھائی وارواک شاہ نے بغاوت کر کے بہار میں پناہ لی۔ ...

                                               

ٹیپو سلطان

ٹیپو سلطان شیرِ میسور، سلطان حیدر علی کے سب سے بڑے فرزند، ہندوستان کے اصلاح و حریت پسندحکمران، بین المذاہب ہم آہنگی کی زندۂ جاوید مثال، طغرق کے موجد تھے۔

                                               

پانی پت کی تیسری لڑائی

پانی پت کی تیسری لڑائی 14 جنوری 1761ء کو دہلی سے 97 کلو میٹر شمال میں واقع پانی پت کے مقام پر مرہٹہ سلطنت اور احمد شاہ ابدالی کی افغانی فوج سے ہوئی۔ روہیلہ، نجيب الدولہ، دوآب کے افغان اور اودھ کے نواب شجاع الدولہ نے ابدالی کا ساتھ دیا۔ مرہٹہ فوج ...

                                               

پانی پت کی دوسری لڑائی

ہمایوں کی وفات کے بعد اکبر اعظم کی تخت نشینی کا اعلان ہوا تو ہیموں بقال نے جو عادل شاہ کا وزیر اور بڑا صاحب قوت و اقتدار تھا نے دہلی پر قبضہ کرنا چاہا۔ بیرم خان نے اس کی مزاحمت کی۔ نومبر 1556ء میں پانی پت کے میدان میں دنوں فوجیں آمنے سامنے ہوئیں۔ ...

                                               

پانی پت کی پہلی لڑائی

مغل بادشاہ ظہیر الدین بابر اور سلطان ابراہیم لودھی شاہ دہلی کے درمیان 1526ء میں پانی پت کے میدان میں ہوئی۔ سلطان ابراہیم کی فوج ایک لاکھ جوانوں پر مشتمل تھی۔ اور بابر کے ساتھ صرف بارہ ہزار آدمی تھے۔ مگر بابر خود ایک تجربہ کار سپہ سالار اور فن حرب ...

                                               

پاٹلی پتر

                                               

پدماوت

پدماوت اودھی زبان کا پہلا رزمیہ ہے۔ جو 1540 میں ملک محمد جائسی نے لکھا۔ یہ چتوڑ کے راجپوت راجا رتن سین اور رانی پدمنی کی محبت کا قصہ اور علاؤ الدین خلجی کے رانی کے عشق میں مبتلا ہونے اور چتوڑ قلعے پر چڑھائی کرنے کی داستان ہے۔ کہانی کی تاریخی حیثی ...

                                               

پرتھوی راج چوہان

دہلی اور اجمیر کا آخری ہندو راجہ جو رائے پتھورا گجر کے نام سے بھی مشہور ہے۔ اس کی بہادری کے کارنامے شمالی ہندوستان میں مشہور ہیں۔ اس نے اپنے ہمسایہ راجپوت حکمرانوں کے ساتھ کئی جنگیں لڑیں۔ جے چند والیء قنوج کی لڑکی سنجوگتا اور پرتھوی راج چوہان آپس ...

                                               

پنڈارے

وسط ہند کے بے رحم اور جرائم پیشہ لوگوں کا گروہ۔ یہ لوگ قومی یا مذہبی اتحاد سے بالکل بیگانہ تھے اور مختلف قوموں اور فرقوں سے تعلق رکھتے تھے۔ لوٹ مار کے دوران انسانیت سوز مظالم ڈھانے سے بھی دریغ نہیں کرتے تھے۔ اٹھارھویں صدی کے سیاسی انتشار سے فائدہ ...

                                               

پژاشی راجا

پژاشی راجا بھارت کی تحریک آزادی کے سب سے پہلے مجاہدوں میں سے تھے۔ وہ برطانیہ راج کے خلاف میدانِ کارزار میں اٹل رہا، اس لیے انھیں تاریخِ ہند میں ویرا کیرالا سِمہم یعنی بہادر شیرِ کیرالا کے خطاب سے یاد کرتے ہیں۔

                                               

چاند بی بی

چاند بی ، چاند خاتون یا چاند سلطانہ کے نام سے بھی جانی جاتی ہیں۔ یہ ہندوستانی خاتون، بیجاپور سلطنت اور احمد نگر سلطنت کی ملکہ یا سلطانہ رہ چکی ہیں۔ ۔ چاند بی احمد نگر سلطنت کی دفاع کے لیے، مغل بادشاہ اکبر سے جنگ کے لیے مہشور ہیں۔ حسین نظام شاہ اح ...

                                               

چندر ونش

قدیم ہندوستان کے شاہی خاندان میں سے ایک جو سوم ’’سوما ‘‘ یا چاند کی اولاد سمجھا جاتا ہے۔ یہ ابتری رشی کا بیٹا اور بدھ یا عطارد کا باپ تھا۔ بدھ کی شادی الا سے ہوئی تھی جو سورج بنسی خاندان کے راجا اکشواکو کی بیٹی تھی۔ اس کے بطن سے پردورس پیدا ہوا۔ ...

                                               

چندرگپت موریا

چندر گپت موریا ہندوستان کی موریا سلطنت کا بانی تھا۔ عام روایات کے مطابق یہ نند"چندر خاندان کا فرد تھا جوکسی بنا پر راجا کی ناراضی سے ڈر کر پنجاب کی طرف بھاگ گیا تھا۔ پنجاب میں چندر گپت پنجاب و سرحد کے غیر مطمعین قبائل کا رہنما بن گیا۔ اس نے اپنے ...

                                               

چوآڑ بغاوت

جھارکھنڈ کے ادیواسیوں نے ، رگوناتھ مہتو کی سربراہی میں ، جنگجو کی آزادی ، زمین کے دفاع اور کئی اقسام کے استحصال کے لئے ایسٹ انڈیا کمپنی کے خلاف سن 1769 میں ایک تحریک شروع کی ، جسے چوواد بغاوت کہا جاتا ہے۔ یہ تحریک 1805 تک جاری رہی۔ مقامی قبائلی ل ...

                                               

کرشنا دیوا رایا

کرشنا دیوا رایا: دور حکومت 1509-1529 ء ؛ وجے نگر سلطنت کا مشہور بادشاہ۔ تولووا خاندان کا تیسرا بادشاہ تھا۔ اس کے دور میں وجے نگر سلطنت بلند مقام کو پہنچی تھی۔ اس کو کئی القاب ملے تھے جن میں ‘کناڑا راجیہ راما رامنا‘، ‘آندھرا بھوجا‘ اور ‘مورو رایار ...

                                               

کول بغاوت

کول بغاوت 1831 عیسوی میں کول قبیلے کے ذریعہ انگریزی حکومت کے ظلم کے خلاف بغاوت ہے۔ ہندوستان میں انگریزوں کے خلاف یہ ایک اہم بغاوت ہے۔ یہ سرکشی انگریزوں کے استحصال کا بدلہ لینے کے لئے کی گئی تھی۔ اس ذات کے لوگ صدیوں سے چھوٹا ناگپور کے سطح مرتفع عل ...

                                               

کھڑیا بغاوت

کھڑیا بغاوت 1880 میں تیلنگا کھڑیا کی سربراہی میں ہوئی ۔ اس تحریک نے اپنی مٹی کی حفاظت کے لئے آغاز کیا۔ جنگلاتی سرزمین سے انگریزوں کو ختم کرنے کے لئے ، نوجوانوں کو گیجٹ ، تیر اور تلواریں چلانے کی تعلیم دی گئی تھی۔ تلنگی کی اہلیہ رتنی کھڈیا نے ہر م ...

                                               

کھیروار تحریک

                                               

گرجر پرتیہار خاندان

گُرجر پرتیہار خاندان ایک ہندوستانی راج تھا جس نے قرون وسطی کے زمانے میں وسطی شمالی ہندوستان کے ایک بڑے حصے پر حکمرانی کی ، جس کی بنیاد ناگ بھٹ نے 625 ء میں قائم کی تھی۔ گرجر پرتیہار سلطنت توسیع میں زیادہ سے زیادہ منظم اور منظم تھی۔ گرجر پرتیہار ، ...

                                               

یوم آزادی بھارت

یوم آزادی بھارت میں ہر سال 15 اگست کو قومی تعطیل کے طور پر منایا جاتا ہے۔ سنہ 1947 میں اسی تاریخ کو ہندوستان نے ایک طویل جدوجہد کے بعد مملکت متحدہ کے استعمار سے آزادی حاصل کی تھی۔ برطانیہ نے قانون آزادی ہند 1947ء کا بل منظور کر کے قانون سازی کا ا ...

                                               

عمرو بن معد یکرب الزبیدی

عمرو بن معد یکرب الزبیدی 535 تا 643 یمن کا شہسوار، عرب کا خطیب اور قادسیہ کا ہیرو۔ اس کا سلسلہ نسب قحطان سے جاملتا ہے، اس کی کنیت ابو ثور ہے۔ جب بنی اکر 9 ہجری میں غزوہ تبوک سے واپس آ رہے تھے تو آپ کو راستے میں ملا اور یہ قوم سمیت مسلمان ہو گیا۔ ...

                                               

ایالت یمن

                                               

بنو قحطان

بنو قحطان بنو عدنان کے مقابلے پر عرب کے دوسرے قبائل کا بنیادی نام ہے۔ بنو قحطان کی مختلف شاخیں ہیں۔ یہ سب بھی سام بن نوح کی اولاد میں سے ہیں اور ان کا قدیم وطن یمن ہے۔ یہ یمن اور اس کے قرب و جوار کے باشندے ہیں اور عرب عاربہ بھی کہلاتے ہیں۔ بنو جر ...

                                               

زبور

زبور عبرانی صحائف میں سے ایک کتاب ہے۔ زبور کے لغوی معنوں میں سے ایک پارے اور ٹکڑے کے ہیں۔ نزول کے اعتبار سے چار مشہور آسمانی کتابوں میں زبور کا دوسرا نمبر ہے ۔ قرآن کے مطابق زبور داؤد پر نازل ہوا۔ جبکہ مسیحی و یہود اسے عام طور پر داؤد کا کلام یا ...

                                               

ولایت یمن

                                               

بوسیفالس

سکندر اعظم کے گھوڑے کا نام۔ ایک سوداگر اس کے باپ کے پاس لایاتھا۔ لیکن وہ کسی کو پاس نہیں آنے دیتا تھا۔ دراصل وہ اپنے سائے سے ڈرتا تھا۔ سکندر نے اس بات کو تاڑلیا۔ اس نے گھوڑے کا منھ سورج کی طرف کر دیا۔ جب اس کو سایہ نظر نہ آیا تو وہ دھیما پڑ گیا۔ ...

                                               

دشت قپچاق

دشت قپچاق ، بحیرہ ارال کے شمال سے لے کر مغرب کی جانب بحیرہ اسود کے شمال تک پھیلے ہوئے علاقے کا تاریخی نام ہے جو موجودہ قازقستان، جنوبی روس، یوکرین، جنوبی مالڈووا اور مغربی افلاق پر مبنی تھا-

                                               

یوگوسلاویہ

مملکت یوگوسلاویہ 1918 میں پہلی عالمی جنگ کے فوری بعد قائم ہوئی۔ اس کا قیام دو ریاستوں، ریاست سلووینیا، کروشیا اور سربیا اور مملکت سربیا کے اتحاد سے عمل میں آیا۔ 1929 میں سرکاری طور پر نام تبدیل کر کے یوگوسلاویہ رکھ دیا گیا۔

                                               

ایالت بوسنیا

ایالت بوسنیا یا ایالت بوسنا سلطنت عثمانیہ کی ایک ایالت تھی، جو کم و بیش موجودہ بوسنیا و ہرزیگووینا کے علاقہ پر قائم تھی۔ عظیم ترکی جنگ سے قبل اس میں سلاوونیا، لیکا، دیلماشا اور کرویئشا بھی شامل تھے۔ انیسویں صدی میں اس کا رقبہ 20.281 مربع میل تھا۔

                                               

عثمانی زمانہ تعطل

عثمانی زمانہ تعطل یا عثمانی خانہ جنگی سلطنت عثمانیہ کے شہزادوں کی اپنے والد بایزید اول کی امیر تیمور کے ہاتھوں شکست کے بعد خانہ جنگی تھی۔

                                               

1878 کی بوسنیا ہرزیگووینا میں آسٹرو ہنگریائی مہم

بوسنیا اور ہرزیگوینا میں آسٹریا ہنگری کی حکمرانی کے قیام کی مہم سلطنت عثمانیہ کے حمایت یافتہ مقامی مزاحمتی جنگجوؤں کے خلاف 29 جولائی سے 20 اکتوبر 1878 تک جاری رہی۔ آسٹریا ہنگری کی فوج دو بڑی نقل و حرکت میں ملک میں داخل ہوئی: ایک شمال سے بوسنیا او ...

                                               

ستاری گراد، سرائیوو

                                               

سنجاق بوسنیا

سنجاق بوسنیا ترکی: Bosna Sancağı، بوسنیائی: Bosanski Sandžak) سلطنت عثمانیہ کے سنجاق میں سے ایک تھی جو 1463ء میں مملکت بوسنیا سے حاصل کی گئی زمین پر قائم کی گئی۔

Free and no ads
no need to download or install

Pino - logical board game which is based on tactics and strategy. In general this is a remix of chess, checkers and corners. The game develops imagination, concentration, teaches how to solve tasks, plan their own actions and of course to think logically. It does not matter how much pieces you have, the main thing is how they are placement!

online intellectual game →